اپ ڈیٹس
  • 239.00 انڈے فی درجن
  • 442.00 زندہ مرغی
  • 641.00 گوشت مرغی
  • پولٹری
  • چینی یوآن قیمت خرید: 38.61 قیمت فروخت : 38.71
  • امریکن ڈالر قیمت خرید: 278.36 قیمت فروخت : 278.86
  • یورو قیمت خرید: 301.35 قیمت فروخت : 301.95
  • برطانوی پاؤنڈ قیمت خرید: 352.65 قیمت فروخت : 353.30
  • آسٹریلیا ڈالر قیمت خرید: 182.61 قیمت فروخت : 183.11
  • کینیڈا ڈالر قیمت خرید: 206.29 قیمت فروخت : 206.79
  • جاپانی ین قیمت خرید: 1.80 قیمت فروخت : 1.83
  • سعودی ریال قیمت خرید: 74.19 قیمت فروخت : 74.34
  • اماراتی درہم قیمت خرید: 75.76 قیمت فروخت : 75.91
  • کرنسی مارکیٹ
  • تولہ: 211600 دس گرام : 181400
  • 24 سونا قیراط
  • تولہ: 193965 دس گرام : 166282
  • 22 سونا قیراط
  • تولہ: 2382 دس گرام : 2044
  • چاندی تیزابی
  • صرافہ بازار
شہرکی خبریں

پاکستان میں سگریٹ پر ٹیکس لگانے اور پالیسیاں بنانے کے حوالے سے حکمت عملی کا فقدان

04 Jan 2024
04 Jan 2024

(لاہور نیوز) سگریٹ انڈسٹری کے اثر و رسوخ نے ملک کی مالیاتی بہبود اور صحت عامہ دونوں کو نقصان پہنچایا، سسٹین ایبل ڈویلپمنٹ پالیسی انسٹی ٹیوٹ (ایس ڈی پی آئی ) نے ایف بی آر کے اعداد و شمار کی جانچ پڑتال کے بعد رپورٹ جاری کر دی ہے۔

رپورٹ کے مطابق ڈبلیو ایچ او کا تخمینہ ہے کہ تمباکو کے استعمال کی وجہ سے دنیا بھر میں ہر سال 80 لاکھ سے زیادہ لوگ موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں، پاکستان میں 2019ء میں ہر 1 لاکھ افراد میں سے 135.14 اموات ریکارڈ کی گئیں جن کی کل تعداد تقریباً 3 لاکھ 37 ہزار 500 ہے۔

پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف ڈویلپمنٹ اکنامکس (PIDE) کی ایک تحقیق کے مطابق 2019ء کے لئے پاکستان میں تمباکو نوشی سے متعلق بیماریوں اور اموات کی کل لاگت 615.07 بلین روپے ($3.85 بلین) تک پہنچ گئی، جس میں بالواسطہ اخراجات (روگ اور اموات) بنتے ہیں۔

تاہم سگریٹ کی صنعت فیصلہ سازی پر اثر انداز ہونے میں کامیاب رہی، جس کے نتیجے میں نہ صرف ممکنہ آمدنی میں 567 ارب روپے کا نقصان ہوا بلکہ ملک کے نازک صحت کے نظام پر اضافی بوجھ بھی پڑا۔

عالمی بینک نے "پاکستان میں تمباکو کے استعمال کا جائزہ، تمباکو کنٹرول قانون سازی اور ٹیکسیشن" کے عنوان سے اپنی رپورٹ میں یہ بھی انکشاف کیا ہے کہ مالی سال 2016-2017ء میں حکومتی محصولات میں کمی کی منصوبہ بندی طاقتور سگریٹ انڈسٹری نے کی تھی، یہ مطالعہ ملٹی نیشنل کمپنیوں کے اثر و رسوخ اور تین درجے ایکسائز ڈیوٹی کے ڈھانچے کو متعارف کرانے پر توجہ دلایا گیا ہے، جس سے ٹیکس چوری اور صحت عامہ پر اس کے منفی اثرات کے بارے میں خدشات بڑھتے ہیں۔

اس میں کہا گیا ہے کہ متعلقہ عوامل کی پیچیدہ جانچ اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ صحت عامہ کو ترجیح دیتے ہوئے آمدنی کے حصول کے لئے ٹیکس کی پالیسیوں کا محتاط ازسرنو جائزہ لینے کی ضرورت ہے، ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) صحت عامہ کے اقدامات کی موثر ترقی اور نفاذ کے لئے سگریٹ کمپنیوں کے ذاتی مفادات سے تمباکو ٹیکس کی پالیسیوں کو محفوظ رکھنے کی ضرورت پر زور دیتا ہے، تاہم، پاکستان میں ایسا نہیں ہوا۔

اس تحقیق میں اس بات پر بھی روشنی ڈالی گئی کہ کس طرح اعلیٰ اور درمیانی آمدنی والے ممالک نے سگریٹ کی مصنوعات پر کھپت کو کم کرنے اور حکومتی محصولات میں اضافے کے لئے کامیابی کے ساتھ زیادہ ٹیکس عائد کئے لیکن حقیقت یہ ہے کہ پاکستان میں اب بھی سگریٹ پر ٹیکس لگانے اور قیمتوں کو صحت عامہ کے آلے کے طور پر استعمال کرنے کے حوالے سے واضح حکمت عملی کا فقدان ہے۔

مطالعہ کے مطابق قومی احتساب بیورو (نیب)، سینیٹ کی خصوصی کمیٹی اور آڈیٹر جنرل آف پاکستان ریونیو (اے جی پی آر) نے بھی کثیرالقومی سگریٹ انڈسٹری کو درپیش چیلنجوں کی توثیق کی ہے، پاکستان میں سگریٹ کی صنعت پر دو ملٹی نیشنل کمپنیوں کا غلبہ ہے جو پاکستان بھر میں گھریلو برانڈز فروخت کرتی ہیں، جو انہیں پالیسی سازوں پر بے پناہ کنٹرول اور اثر و رسوخ فراہم کرتی ہے۔

کثیر القومی کمپنیوں پر طویل عرصے سے حکومت کو سگریٹ مارکیٹ کے قابل اعتراض اعداد و شمار پر انحصار کرنے پر مجبور کرنے کا الزام لگایا جاتا رہا ہے، ایس ڈی پی آئی نے کہا کہ جیسے جیسے قوم ان خطرناک نتائج سے دوچار ہے، ماہرین تجویز کرتے ہیں کہ سگریٹ پر زیادہ ٹیکسوں کا نفاذ صحت عامہ کو فروغ دینے اور اس کے ساتھ ساتھ ملک کی معاشی بہبود کو تقویت دینے میں ایک فعال اقدام کے طور پر کام کر سکتا ہے۔

Install our App

آپ کی اس خبر کے متعلق رائے